• Bikharta Samaj

بکھرتا سماج


Book Details
ISBN 978-969-652-056-6
No. of Pages 192
Format Hardcover
Publishing Date 2016
Language Urdu

فرخ سہیل گوئندی کی تحریروں کے موضوعات سماج، سیاسیات، عالمی سیاست اور تاریخ ہیں۔ وہ پاکستان کے ان لوگوں میں شمار ہوتے ہیں جنہوں نے تحریر و تقریر کے ذریعے اپنا ایک خاص مقام بنایا۔ ان کے قلم کا انداز جس قدردل پذیر ہے، اسی قدر ان کی تقریر کا انداز بھی پُراثر ہے۔ یہ اعزاز کم لوگوں کو ہی حاصل ہوتا ہے۔ انہوں نے ٹیلی ویژن سکرین کے ذریعے بھی اپنے تجزیوں سے ناظرین کو اپنی طرف متوجہ کیا۔ ان کی تحریریں تحقیق، منطق اور معلومات سے لبریز ہوتی ہیں۔ پاکستان کے علاوہ مشرقِ وسطیٰ،ترکی اور عالمی سیاسیات ان کی خصوصی دلچسپی کے موضوعات میں سرفہرست ہیں۔
اُن کی زیرنظر کتاب سماج کے ان معاملات کا احاطہ کرتی ہے جس پر ہمارے ہاں کم ہی لکھا جارہا ہے۔ وہ ترقی پسند فکر رکھنے والے دانشوروں میں شمار ہوتے ہیں، اسی لیے سماج کے اندر برپارحجانات کو وہ سیاست سے علیحدہ تصور نہیں کر سکتے۔ فرخ سہیل گوئندی کی تحریریں پاکستانی سماج کے ان تضادات کو بے نقاب کرتی ہیں جن کے سبب ہمارا سماج پسماندگی میں دھنسا ہوا ہے۔ یہ کتاب ایسے ہی موضوعات سے متعلق ہے، خصوصاً ان کا یہ کہنا کہ ریاست کابکھرنا اتنا خطرناک نہیں جس قدر سماج کا بکھر جانا خطرناک ہے۔ وہ درست کہتے ہیں کہ جہاں ریاستیں بکھر گئیں وہاں اس قدر نقصان نہ ہوا، جس قدر نقصان سماج کے بکھرنے کا ہے۔ اس حوالے سے یہ کتاب آج کے حالات میں ایک منفرد موضوع ہے۔ فرخ سہیل گوئندی نے اس کتاب میں پاکستان کی نیم سرمایہ دارانہ، نیم جاگیردارانہ، نیم قبائلی سماج کے تضادات کو جس خوبی سے بیان کیا ہے، یہ انہی کا کمال ہے۔ انہوں نے اس عمل کو Colombianization قرار دیا ہے اور حیران کن اور متاثرکن بات یہ ہے کہ اس حوالے سے انہوں نے دو دہائیوں قبل نشاندہی کرنا شروع کر دی تھی۔ ”بکھرتا سماج“ اس موضوع پر ایک اہم کتاب کے طور پر جانی جائے گی کہ ایک ایسی ریاست جس کی رِٹ بکھرنے سے زیادہ خطرناک رجحان سماج کے بکھرنے کا ہے اور ریاست کی رِٹ کی جگہ منظم مجرم، دہشت گرد مسلح گروہ لے رہے ہیں جو اس سماج کے بکھرنے پر غالب ہونے کی طاقت حاصل کرتے چلے جارہے ہیں۔ ”بکھرتا سماج“ ایک مختلف موضوع پر منفرد کتاب ہے۔
تاہم، ”بکھرتا سماج“ کا یہ رجحان ایسا نہیں ہے کہ بدل نہ سکے۔ بنیادی طور پر، پاکستان نے حالیہ برسوں میں خاص طور پر دہشت گردی اور انتہاپسندی کے خلاف مہم شروع کرنے کے بعد، ماضی کی غلطیوں کو درست کرنے کے لیے ایک قومی عزم کا مظاہرہ کیا ہے۔ اہم سبق یہ ہے کہ ماضی کی غلطیوں کو دہرایا نہ جائے بلکہ ایک زیادہ روادار اور جامع سماج کی تشکیل میں آگے بڑھا اور ماضی کی ان غلطیوں سے سبق سیکھا جائے۔ فرخ سہیل گوئندی کی یہ کتاب اُن پالیسی سازوں، انٹیلی جینشیا اور مو¿رخین کے لیے ایک بروقت "Wake-Up Call" ہے جو پاکستان کے عوام کے لیے ایک بہتر مستقبل چاہتے ہیں۔

Write a review

Note: HTML is not translated!
    Bad           Good

Jumhoori
Catalogue

Image

Jumhoori
Booklist

Image
Image